..مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوجیوں کے ہاتھوں “کشمیریوں کی حالیہ ھلاکتیں ..”ہم کیا چاہتے ہیں؟ آزادی صرف آزادی. “کشمیری قیادت کا دو ٹوک ا علان

اصغر علی مبارک سے : اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل نے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوجیوں کی جانب سے شہریوں کی حالیہ ھلاکت تشویش ناک ھے “شہریوں کو جہاں کہیں بھی وہ آ باد ھیں انکو دیا جانا جانا ، چاہے یہ غزہ میں ھیں چاہے یا پھر جموں اور کشمیر میں ھیں ، “اقوام متحدہ کے چیف کے ترجمان، سٹیفن ڈجرارک نے بریفنگ کے دورانں کہاکہ”شہریوں کے نقصان کی تحقیقات کی ضرورت ہے جہاں کہیں بھی ہو.”اسٹیفن ڈجرارک نے کہا، “سیکریٹری جنرل جموں و کشمیر میں موجود صورتحال کی بابت بہت فکر مند ہے.” انہوں نے کہا کہ وہ بین الاقوامی انسانی حقوق کے تحت شہریوں کی حفاظت کیلئے ذمہ دار ہیں. “انہوں نے مزید کہا،” سیکریٹری جنرل امن کے طریقوں کو تلاش کرنے کے لئے ممبر ریاستوںسے فون پر رابطے کرتے ھیں واضح رھے کہ گزشتہ اتوار کوبھارتیفورسز کی طرف فائرنگ سے سے جنوبی کشمیر کے اضلاع میں کم از کم 20 کشمیری ہلاک ہوئے. اسی دوران پاکستان کے خارجہ کے ترجمان نے “بھارت کی طرف سے ظالمانہ اقدام کی مذمت کی جس کی نتیجے میں کم از کم 20 کشمیری ہلاک ہوئے. بھارتی سیکورٹی فورسز نے کم ازکم 20 معصوم کشمیری نوجوانوں کو اس علاقے میں بدترین تشدد کا نشانہ بناکے شہید کیا .بھارتی فوجیوں کے ہاتھوں قتل عام کے شکار ہونے خاندانوں کے ساتھ راہنماوں نے سید سید علی گیلانی میروا ز عمر فاروق اور محمد یاسین ملک ، مشتاق احمد یکجہتی کا اظہارکیا مظاہرین پر بھارتی فوجیوں کی فائرنگ سے ہلاکتوں میں 20 افراد ہلاک ہو گئے تھے. ایک بیان میں حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی نے کہا کہ بھارت نے غیرملکی کشمیری شہریوں کے خلاف جنگ کا اعلان کیا ہے. انہوں نے کہا کہ بھارتی فوج جنگی جرائم میں ملوث ھے بھارتی قیادت کی طرف سے حوصلہ افزائی کی جاتی رہی ھے مظاہروں کو روکنے کے لئے کٹھ پتلی حکام نے علاقے میں پابندیاں عائد کی.ہیں انہوں نے انٹرنیٹ رکاوٹ جاری رکھی، جبکہ کشمیر وادی میں تمام اسکولوں اور کالج بند رہے. کشمیری یونیورسٹیکے تمام امتحانات ملتوی ہو گے ھیں . سید علی گیلانی، میروازی عمر فاروق، محمد اشرف ، محمد یاسین ملک، غلام احمد گلزار، حلیم عبد رشید، بلال صدیقی، عمر عادل ڈار، محمد اشرف نے جنوبی کشمیر کے مختلف علاقوں میں شہیدوں کے خاندانوں کے گھروں کا دورہ کیا اور ان کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کیا. کشمیر تحریک نے سرینگر میں احتجاجی مظاہرین منعقد کیے ہیں. کشی برم کے نمائندوں، بیرسٹر عبدالجید ٹرانسبو اور پروفیسر نذیر احمد شال نے اپنے خطوط میں او آئ سی سیکریٹری جنرل، ڈاکٹر یوسف احمد التمتی، یورپی پارلیمان کے صدر، انتونیو تاجانی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا. قتل عام کی مذمت کی انجینئر فاروق نے جنوبی کشمیر میں شہری ہلاکتوں میں فوری تحقیقات کا مطالبہ کیا.انہوں نے علاقے میں خون سے بچنے کے لئے بین الاقوامی برادری کی جانب سے مداخلت کا مطالبہ کیا. انہوں نے کہا کہ بھارت نے کشمیر میں اخلاقی جنگ کھو دی ہے. انہوں نے کشمیر کے تنازعات کو حل کرنے کے لئے پاکستان سے مذاکرات شروع کرنے کا بھی مطالبہ کیا. انہوں نے کہا کہ کشمیر کے تنازعے کا واحد حل جموں و کشمیر میں ریفرنڈم کے حوالے سے ہےجمہوریہ کشمیر مسلم کانفرنس کے صدر مئراج الدین نے کہا ہے کہ کشمیر آزادی کی جدوجہد کے راستے میں قربانیاں پیش کررہے ہیں. انہوں نے ہندوستانی حکمرانوں سے مطالبہ کیا کہ وہ کشمیر کے تنازعے کو حل کرنے کے لئے مثبت اقدامات کریں. جموں کشمیر کے ملازمین تحریک تحریک محمد شفیع لون کے چیئرمین نے ایک بیان میں بھارتی فوجیوں کی طرف سے معصوم افراد کی ہلاکت کی مذمت کی بھارتی فوجیوں کی طرف سے جاری ہونے والی جاری قتل عام میں 18 افراد کو ہلاک کیا. کشمیر کا مسلہ تقسیم کی ایک وراثت ہے جس میں 1947 سے برطانیہ کی واپسی کا سامنا کرنا پڑا. ہندوستان میں انسانی حقوق کے خلاف ورزیوں بڑے پیمانے پر قتل عام، ، تشدد، عصمت دری اور جنسی زیادتی سے میں بھارتی آرمی، سینٹرل ریزرو پولیس فورس (سی آر پی ایف)، بی ایس ایفکے اہلکاروں پر الزام لگایا گیا جموں و کشمیرمیں بڑے پیمانے پر تشدد اور جنسی تشدد سے کشمیری مسلمانوں کی نسل ختم کرنے کا ارتکاب کیا ہےگیا . ایک رپورٹ میں، انسانی حقوق کے واچ نے کہا کہ بھارتی سیکیورٹی فورسز نے “تلاشی کارروائیوں کے دوران شہریوں پر حملہ کیا، تشدد اور حراست میں لے کرقیدیوں کو قتل کر دیا”. رپورٹ کا کہنا ہے کہ رقیدیوں کو جنگ کے ہتھیاروں کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے. رپورٹ نے علیحدگی پسندوں کی طرف سے کئے جانے والے قتل اور بدسلوکی کا بھی ذکر کیا. پ امریکی اسٹیٹ ڈیپارٹمنٹ کی ایک رپورٹ نے کہا، “ہندوستانی حکام مسلح افواج کے خصوصی طاقتور ایکٹ (AFSPA) کا استعمال کرتے ہیں تاکہ جموں اور کشمیر میں شہریوں کی ہلاکتوں کے ذمہ دار اپنی سیکورٹی فورسز کو روکنے سے بچیں. رپورٹ نے بتایا کہ جموں و کشمیر میں بھارتی فوج نے شہریوں کو غیر قانونی قتل کیے ہیں اقوام متحدہ نے کشمیر کے تناظر میں بھارت اور پاکستان کے درمیان کسی انتخاب کا فیصلہ کرنے کے لئے اقوام متحدہ کی قراردادوں میں مباحثہ نہیں کیا ہے. جب جنرل پرویز مشرف جب اقتدار میں تھے، کشمیر پر ایک معاہدے کی پیشکش کی گئی تھی. کہ کنٹرول آف لائن کی سرحد بن جانی چاہیے،یا پھر کشمیرکو خود مختار تسلیم کیا جاۓ
1947 ء میں بھارت اور پاکستان نے برطانیہ سے آزادی حاصل کی ہندوستانی آزادی کے ایکٹ 1947 کے مطابق، اس کے بعد ریاستوں کو بھارت یا پاکستان میں شامل کرنے کے لئے یا آزاد رہنا منتخب کرنے کے لئے چھوڑ دیا گیا تھا. کشمیر کے حکمران مہاراجہ ہری سنگھ ہندو تھے ہری سنگھ نے1947 ء میں 26 اکتوبر کو کشمیر میں بھارت کوبلا لیا . اس نے بعد جنگ 1948، جنگ 1965 ،جنگ1971جنگ 1999 لڑی گئی کشمیری پاکستان کے ساتھ اتحاد کو ترجیح دیتے ہیں. ، جس کی وجہ جموں کشمیر کی آبادی 60 فی صد مسلم ہے. . بھارت جموں و کشمیر کے پورے ریاست کا دعوی کرتا ہے،جو جموں، کشمیر وادی، لداخ اور سیاچن گلیشیئر پر مشتمل ہے. کشمیر کے تنازعات بنیادی طور پر بھارت اور پاکستان کے درمیان 1947 ء میں بھارت کی تقسیم کے بعد شروع ہوئی ہے. چین نے کبھی بھی معمولی کردار ادا کی ہے. بھارت اور پاکستان نے کشمیر پر تین جنگیں لڑائی ہیں، جن میں 1947 اور 1965 کے ہندوستانی پاکستانی جنگوں اور 1999 کے کارگل جنگ سمیت بھی شامل ہیں. کشمیر میں 2016 سے 2018 کی بغاوت، برهان کے بعد نام سے جانا جاتا ہے، اس سلسلے میں تشدد کا سلسلہ بھارتی انتظامیہ جموں و کشمیر کے کشمیر وادی میں احتجاج یہ 8 جولائی 2016 کو ہندوستانی سیکورٹی فورسز کی جانب سے ایک آزادی پسند نوجوان برهان وانی کےشہا دت کے ساتھ شروع ہوا. اس کی شہا دت کے بعد، کشمیر وادی کے تمام 10 اضلاع میں بھارتی مخالف احتجاج شروع ہوگئے. 11 جولائی کو، پھر پاکستان ‘ ایک بیان میں بھارتی وزیراعظم نواز شریف نے بھارتی سیکورٹی فورسز کے ہاتھوں برهان وانی اور دیگر شہریوں کی ہلاکت پر “افسوس ” کا اظہار کیا. انہوں نے یہ بھی کہا کہ یہ “ناقابل قبول ” ہے کہ شہریوں کے خلاف غیر معمولی طاقت کا استعمال کیا جاۓ “. 13 جولائی کو سابق پاکستان کے آرمی اسٹاف راحیل شریف نے ہندوستانی سیکورٹی فورسز کے مظاہرین کی ہلاکتوں کی مذمت کی. سابق وزیر اعظم نواز شریف نے کہا کہ 20 جولائی کشمیری عوام کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کرنے کے لئے “سیاہ دن” کے طور پر منعقد کیا جائے گا. پاکستان کے تمام سفارتی مشن اس مسئلے پر روشنی ڈالنے کے لئے خصوصی تقریبات منعقد کی گئیں خصوصی پیغام میں، سابق وزیر اعظم پاکستان نواز شریف نے کہا کہ بھارت کو “اختیار نہیں” کشمیر میں “آزادی کی لہر” اسطرح روکے سابق وزیر اعظم نواز شریف نے اعلان کیا ہے کہ پاکستان اسلامی تعاون کی تنظیم کے ذریعہ اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کونسل سے رابطہ کرے گا. کشمیر میں شہریوں کی ہلاکت پر پابندی لگائی. اقوام متحدہ میں پاکستان کے سفیرنے کشمیر کی صورتحال پر کہا کہ کشمیر کے بنیادی انسانی حقوق کی خلاف ورزی کی جارہی ہے. یکم اگست کو، پاکستان کی پارلیمنٹ نے ایک متفقہ طور پر کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر مذمتی قرارداد کو منظور کیا جس میں اقوام متحدہ کے انسانی حقوق سے متعلق ایک ٹیم بھیجنے کی درخواست کیگئی اور کہا کہ “کشمیری نوجوان خود مختاری کا حق حاصل کرنے کے لئے قربانی کے نئے باب لکھ رہے ہیں. . ” پاکستان کی حکومت نے بدامنی میں زخمی افراد کو طبی علاج فراہم کرنے کی بھی پیشکش کی اور بین الاقوامی برادری سے درخواست کی کہ وہ ہندوستانی حکومت سے زخمی ہونے والے کشمیریوں کو علاج فراہم کرنے کی اجازت دے جو ہندوستانی حکومت کی طرف سے مسترد کردی گئی . 26 اگست کو، سرتاج عزیز نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل اور یورپی یونین کے سفیروں سے ملاقات میںکشمیر میں بھارتی سیکورٹی فورسز کی طرف سے “قتل اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں” کے بارے میں سفیروں کو آگاہ کیادفتر خارجہ کے ترجمان نے کہا کہ نواز شریف نے بان کی مون کو ایک اور خط لکھا ہے کہ کشمیر میں صورتحال خراب ہو رہی ہے اور علاقے میں مبینہ طور پر انسانی حقوق کے خلاف مبینہ طور پر انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی تحقیقات کے لئے ایک حقیقتتلاش کےلئے مشن کو بھیجا جاۓ . 21 ستمبر کو اقوام متحدہ کے جنرل اسمبلی میں اپنی تقریر کے دوران، نواز شریف نے برهان وانی کو “نوجوان رہنما” کے طور پر پیش کیا اور مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ مجرمانہ قتل میں آزادانہ انکوائریکی جاۓ کشمیر پر 30 مئی 2017 کو، پنجاب اسمبلی نے ایک متفقہ طور پر ایک قراردادمنظور کی جس نے پاکستان کی وفاقی حکومت سے مطالبہ کیا کہ اقوام متحدہ میں فوری طور پر تشدد کا مسئلہ اٹھائے جائیں. اقوام متحدہ کے سربراہ بان کی مون نے کشمیر کے کشیدگی کی صورتحال پر اپنی تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ کشمیر کے تنازعہ کو حل کرنے کے لئے بھارت اور پاکستان کے درمیان ثا لثی کی پیشکش کی؛اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن نے بھارتی حکومت کو کشمیر کا دورہ کرنے سے درخواست کی کہ وہ انسانی حقوق کے خلاف ورزیوں کی تحقیقات کرنے کی تحقیقات کرے؛ تاہم یہ درخواست نئی دہلی میں 12 اگست کو تمام سیاسی جماعتوں کی جانب سے ملک کے اندرونی معاملات میں مداخلت کا الزام عائد کرنے کے الزام میں ایک ملاقات کے دوران متفق طور پر رد کر دیا گیا انسانی حقوق کے اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر شہزادہ زید بن راشاد نے بھارت سے اپیل کی کہ وہ مبصرین کو علاقے تک رسائی د ے. ریاستہائے متحدہ کے ترجمان جان کربی نے 12 جولائی کو واشنگٹن میں میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا ہے کہ جموں و کشمیر میں تشدد کے بارے میں امریکہ کاآگاہ ھے جس میں 30 افراد بھارتی فورسز کی طرف سے ہلاک ہو چکے ہیں. کربی نے ایک پرامن حل تلاش کرنے کا مطالبہ کیا کہ امریکہ کشمیر میں شہریوں کی تشدد اور موت کے بارے میں فکر مند ہے . اگست میں، او سی کے سیکرٹری جنرل امین بن امین مدنی نے اسلام آباد میں ایک پریس کانفرنس کے دوران کہا تھا کہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں “بھارتی ریاست کا اندرونی معاملہ نہیں” “بین الاقوامی برادری کو بھارت میں ظلم و غصہ کے خلاف اپنی آواز بلند کرنا چاہئے. کشمیر کی صورت حال ایک ریفرنڈم کی طرف بڑھ رہی ہے. کسی بھی ریفرنڈم سے خوفزدہ نہیں ہونا چاہئے اور حل اقوام متحدہ کی قراردادوں کے ذریعہ ہونا چاہئے. ترکی کے خارجہ وزیر نے تنازعات کو حل کرنے کی ضرورت پر زور دیا، جبکہ آذربائیجان کے خارجہ وزیر نے او ایس آئی سے ملاقات کی کہ “انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو اجاگر کرنے کے جدید ذرائع” کو تلاش کرنے کے لۓ “چین کی وزارت خارجہ کے ترجمان Lu Lu، پریس کانفرنس میں ایک بیان میں، بدامنی کی وجہ سے ہلاکتوں پر حکومت کی تشویش کا اظہار کیا اور کشمیر کے مسئلے کو مناسب طریقے سے لے کر بلایا. ترکی کے وزیر خارجہ مولوی راؤروغلوغلو نےپریس ڪانفرنس میں کہا کہ ان کا ملک اسلامی تعاون تنظیم ایک ٹیم بھیجنے کی پوزیشن میں ہے تاکہ کشمیر میں انسانی حقوق کے خلاف ورزیوں کی تحقیقات کی جائے.”ایمنسٹی انٹرنیشنل نے الزام لگایا ہے کہ بھارتی سیکورٹی فورسز” کشمیر میں احتجاجی مظاہروں سے نمٹنے کے لئے ا خلاف ورزی کا مظا ہرہ کیا کشمیریوں نے 1989 میں مکمل طور پر مسلح جدوجہد کا آغاز کیا. 26 جون، 2017 کو امریکی صدر ڈونالڈ ٹمپمپ اور بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کے اجلاس میں صرف دو گھنٹے پہلے، امریکی محکمہ خارجہ کے حکم میں “ایکشن میں ڈپلومیسی” نے اس فہرست میں حزب الاسلام کے سپریم کمانڈر سید صلاح الدین کا نام بھی شامل کیا جس میں امریکی اصطلاح کے مطابق “خصوصی نامزد گلوبل دہشت گردی” کہا گیا.سید صلاح الدین نے اقوام متحدہ کے چارٹر اور بین الاقوامی کنونشنز میں آزادی تحریک کے تحت حصہ لیا”وہ ابھی تک خطرہ نہیں ہیں. کیا امریکہ انہیں خطرہ بنانے کی کوشش کررہا ہے؟ . یہ تسلیم شدہ حقیقت ھے کہ جموں و کشمیر بھارت کا حصہ نہیں اس کا مطلب یہ ہے کہ یہ متنازعہ علاقہ ہے اور بھارتی انتظامیہ بھارتی قبضے کا نتیجہ ہے. خطے کا مستقبل ابھی تک خود فیصلہ کرنے کے حق کے مطابق فیصلہ نہیں کیا جاسکتا ہے. جموں و کشمیر کے لوگوں کا نعرہ ہے، “ہمارا مسئلہ فنانس سے متعلق نہیں ہے، نہ ہی ہم روزگار حاصل کرنا چاہتے ہیں. یہ سیاسی اور سماجی مفادات کا مسئلہ نہیں ہے. یہ خود مختار اور آزادی کے حق
سے وابستہ ہے. “. “ہم کیا چاہتے ہیں؟ آزادی صرف آزادی. “یہ کشمیر کے لوگوں کا نعرہ ہے.

اپنا تبصرہ بھیجیں