العزیزیہ ریفرنس: نیب کے گواہ واجد ضیاء کا بیان تیسرے روز بھی مکمل نہ ہوسکا

اسلام آباد: سابق وزیراعظم نواز شریف کے خلاف العزیزیہ ریفرنس میں قومی احتساب بیورو (نیب) کے آخری گواہ واجد ضیاء کا بیان تیسرے روز بھی مکمل ہوسکا اور سماعت کل تک کے لیے ملتوی کردی گئی۔اسلام آباد کی احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے نواز شریف کے خلاف العزیزیہ ریفرنس کی سماعت کی، اس موقع پر نامزد ملزم عدالت کے روبرو پیش ہوئے۔ استغاثہ کے آخری گواہ واجد ضیاء نے مسلسل تیسرے روز العزیزیہ ریفرنس میں اپنا بیان قلمبند کرایا اور امکان ظاہر کیا جارہا ہے کہ کل ہونے والی سماعت کے دوران ان کا بیان مکمل ہوجائے گا۔ نیب کے گواہ کا بیان مکمل ہونے کے بعد نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث واجد ضیاء پر جرح کریں گے۔واجد ضیاء نے آج دوران سماعت اپنا بیان قلمبند کراتے ہوئے عدالت کو بتایا کہ گلف اسٹیل ملز کی فروخت سے متعلق شریف خاندان کے دعوے کی تصدیق کے لیے خط لکھا جب کہ یو اے ای نے گلف اسٹیل ملز کے 25 فیصد شیئرز کی فروخت کا دعوی غلط قرار دیا۔
واجد ضیاء کے مطابق گلف اسٹیل کی فروخت سے 12 ملین درہم کی ٹرانزیکشن کا کوئی ریکارڈ نہیں ملا اور دبئی کورٹ سسٹم میں 1980 کے معاہدے کی نوٹرائزیشن کا بھی کوئی ریکارڈ نہیں ملا۔نیب کے گواہ نے کہا کہ نتیجہ اخذ کیا کہ سپریم کورٹ میں مریم، حسن اور حسین نواز کی طرف سے جعلی دستاویزات دی گئیں، آہلی اسٹیل ملز کے اسکریپ کی تفصیل کا حسین نواز کا دعویٰ بھی جھوٹا نکلا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.