چین نے شمسی توانائی سے بجلی پیدا کرنے والی دنیا کی پہلی سڑک بناڈالی

چوری چکاری کہاں نہیں ہوتی، اور ہمارے ہاں تو یہ جرم بہت ہی عام ہے، لیکن پھر بھی شکر ہے کہ ہمارے ہاں کبھی سڑک چوری نہیں ہوئی۔

جرم کی تاریخ کا یہ عجیب و غریب واقعہ چین میں پیش آ گیا ہے جہاں بے باک چور نئی تعمیر ہونے والی سولر سڑک چرا لے گئے۔ عوام تو عوام، بیچارے سرکاری حکام بھی حیران ہیں کہ یہ کیا ہو گیا۔ جینان شہرمیں چین کی پہلی سولر سڑک ایک ہفتہ قبل ہی بنائی گئی تھی۔ اس سڑکی کی بالائی تہہ سولروں پینلوں سے بنائی گئی تھی تا کہ نقل و حمل کے ساتھ یہ سڑک بجلی بھی پیدا کرے، لیکن افسوس کہ مفت بجلی کا تحفہ ملنے سے قبل ہی سڑک غائب ہو گئی۔نئی سڑک کا افتتاح 28 دسمبر کے روز ہوا اور 2 جنوری کے روز اس کے معائنے کے لئے پہنچنے والی ٹیم کو پتا چلا کہ سڑک کا ایک حصہ غائب ہو چکا تھا۔ یہ کام ایسی مہارت اور پھرتی سے ہوا ہے کہ ہر کوئی چوروں کی مہارت اور دیدہ دلیری پر حیران رہ گیا ہے۔ کیا یہ چوری صرف سولر پینل چرانے کی کاروائی تھی یا اس کا کوئی اور مقصد بھی تھا، اس بارے میں بحث ابھی جاری ہے۔ سرکاری حکام کا خیال ہے کہ محض سولر پینل چرانا مقصد نہیں تھا بلکہ کسی نے سولر روڈ کی نئی ٹیکنالوجی چرانے کی کوشش کی ہے تا کہ اس کی سستی نقل بنا کر مارکیٹ میں فروخت کی جاسکے۔ واضح رہے کہ سولر سڑکوں کو بنانا اور پھر ان کی حفاظت کرنا ایک مشکل اور مہنگا کام ہے۔ یہی وجہ ہے کہ دنیا میں یہ آئیڈیا زیادہ مقبول نہیں ہو سکا۔ چینی حکومت نے سڑک کا چوری ہونے والا حصہ دوبارہ بنا دیا ہے البتہ چوروں کا تاحال کچھ پتہ نہیں چل سکا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں