18

مصطفیٰ کمال: فاروق ستار کی درخواست پر اسٹیبلشمنٹ نے ہمیں ملوایا ہے

پاک سر زمین پارٹی کے چیئرمین مصطفیٰ کمال نے تصدیق کی ہے کہ ان کی جماعت اور متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے درمیان سیاسی اتحاد کے پیچھے اسٹیبلشمنٹ کا ہاتھ تھا۔
سنیچر کو کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے مصطفیٰ کمال نے کہا کہ ‘آج میں پورے پاکستان کو بتانا چاہتا ہوں کہ ہاں ہمیں اسٹیبلشمنٹ نے بلا کر فاروق ستار سے ملوایا اور جب ہم وہاں پہنچے تو فاروق ستار پہلے سے وہاں موجود تھے۔ فاروق ستار کی فرمائش پر ہمیں بلوایا گیا۔
پی ایس پی کے چیئرمین کا کہنا تھا کہ پچھلے آٹھ مہینوں سے فاروق ستار اور ان کی پوری ٹیم فرمائشی پروگرام کر کے ہمیں اسٹیبلشمنٹ کے ذریعے کال کر کے بلاتے تھے اور ہم سے بات کرتے تھے۔
انھوں نے کہا کہ پاکستان میں کون سا صحافی، اینکر، سیاست دان اور بزنس مین ہے جو اسٹیبلشمنٹ سے بات نہیں کرتا ہے۔ ‘ہم تو پہلے دن سے کہتے ہیں کہ ہم اسٹیبلشمنٹ سے بات کرتے ہیں۔’
‘میں اسٹیبلشمنٹ سے بات کرتا ہوں لیکن ایجنٹ نہیں ہوں۔ اگر ایجنٹ ہوتا تو 2013 میں سیینیٹر شپ چھوڑ کر نہ جاتا، ایم کیو ایم میں رہ کر ایجنٹ بنتا، رابطہ کمیٹی میں رہ کر ایجنٹ بنتا۔’
پی ایس پی کے چیئرمین نےکہا کہ فاروق ستار نے انھیں بلوایا تھا اور جب وہ وہاں پہنچے تو وہ پہلے سے وہاں موجود تھے۔ ‘اگر ہم نے انھیں بلوایا ہوتا تو ہم پہلے سے وہاں بیٹھے ہوتے۔’
انھوں نے مزید کہا کہ گذشتہ آٹھ ماہ سے اسٹیبلشمنٹ کے ذریعے اس بات پر میٹنگ کرتے ہیں کہ پی ایس پی ایم کیو ایم پاکستان میں شامل ہو جائے۔
‘میں نے فاروق ستار اور ان کی پوری ٹیم کے سامنے یہ بات کہی تھی کہ اگر آپ مجھے ایم کیو ایم میں شامل ہونے کا کہتے ہیں تو میں اپنی پارٹی بند کرتا ہوں۔ اپنے لوگوں سے کہتا ہوں کہ آپ جہاں سے آئے ہیں وہ چلے جائیں۔ لیکن میں ایم کیو ایم میں شامل نہیں ہو سکتا کیونکہ ایم کیو ایم الطاف حیسن کی تھی، ہے اور رہے گی۔’

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں