دکھ کا احساس

دکھ کا احساس
برسوں قبل جب میرے والد صاحب کا انتقال ہوا تو میں میری بہنیں اس غم میں دھاڑیں مار مار کر رو رہے تھے کہ شفقت اور سربراہی ہم سے جدا ہو گئی تھی اور میری والدہ اس غم میں نڈھال تھیں کہ کیسے آنے والی زندگی میں اپنے بچوں کی پرورش کر پاوں گی. میرے والد کی بہنیں اپنے اکلوتے بھائی کی جدائی میں نڈھال تھیں غرض کہ ہر کوئی جس کا جتنا رشتہ تھا دوستی تھی تعلق تھا سب اپنی اپنی جگہ غم میں مبتلا تھے اور شاید یہی زمانے کا دستور اور رواج و رسم ہے جو صدیوں سے چلا آ رہا ہے اور شاید تا قیامت چلتا رہے تبھی اپنے رشتہ داروں میں سے ایک کو میں نے سرگوشی کرتے سنا کہ مرنے والے نے تو مرنا ہی تھا آج نہیں تو کل موت تو برحق ہے پر انہوں نے تو عجیب تماشہ لگایا ہوا ہے میرے تو آنسو نکلتے ہی نہیں پتہ نہیں یہ لوگ کیسے روتے ہیں مجھے اسکی باتیں تیر کی طرح دل میں چھبیں مگر اس وقت خاموشی سے سہ گیا مگر اسکی یہ بات زندگی بھر کے لئے دماغ میں پیوست ہو گئی..
وقت گزرتا گیا میری ماں نے ہم بہن بھائیوں کی پرورش میں کوئی قصر نہ چھوڑی اور ہم سب جوان ہو گئے ایک دن رات کو ہمارے گھر میں لگے پی ٹی سی ایل کی گھنٹی بجی تو کال کرنے والے موصوف ہستی وہی تھی جس کی آنکھوں میں کبھی آنسو نہیں آئے تھے وہ روتے ہوئے اپنے والد کی وفات کی خبر دی والدہ کے حکم پر ہم فوراً انکے گھر پہنچ گئے ہمیں دیکھتے ہی اس ہستی کی روتے روتے ہچکی بند گئی اور نیم بے ہوشی طاری ہو گئی بس بار بار یہ کہتے رہے کہ جب اپنے پر بنتی ہے تب پتہ چلتا ہے دکھ کا کیا احساس ہوتا ہے
اس سارے قصے کے بیان کرنے کا مقصد یہ ہے کہ آج قصور میں زینب کی موت پر پورا ملک نوحہ خواں ہے مگر کتنے دن زیادہ سے زیادہ ایک ہفتہ میڈیا میں اس ایشو کو زیر بحث لایا جائے گا اور پھر اس طرح کے 12 سے زاہد اسی قصور شہر میں اس پہلے حوس کا شکار ہونے والی حوا کی بیٹیوں کی طرح ہم بھول جائیں گے کیونکہ زینب میری یا آپ کی اولاد نہیں اس کا غم اور دکھ صرف اسکے ماں باپ تا حیات سہتے رہیں گے اور ہم میں سے اکثریت اپنی خوشیوں میں گم ہو جائے گی اور باقی اپنی سیاست اور مفاد کے لئے اسے استعمال کریں گے
دعا ہے رب العزت سے کہ ہمیں ان واقعات سے نصیحت حاصل کرنے کی توفیق عطا فرمائے آمین
کیونکہ زینب ایک بچی کا نام نہیں ہم سب کے گھروں میں زینب ہے.
اپکی دعاؤں کا طالب
ملک عبدالصبور

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.