زینب کے قاتل کی نشاندہی کرنے والے کو ایک کروڑ روپے انعام دیا جائے گا ،شہباز شریف

ایک سال کے دوران اتنے واقعات ہو گئے آپ کیا کرتے رہے، آر پی او شیخوپورہ پر برہمی کا اظہار
پولیس کی فائرنگ سے شہید افراد کے لواحقین کو30 ،30 لاکھ روپے،اہلخانہ میں سے ایک ایک فرد کو سرکاری نوکری دی جائے گی
جن پولیس والوں نے فائرنگ کی انہیں قانون کے مطابق سزا دی جائے گی، وزیر اعلیٰ پنجاب کا اعلیٰ سطح اجلاس سے خطاب.وزیر اعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف نے کہا ہے کہ قصور میں اغواء کے بعد قتل ہونے والی سات سالہ بچی زینب کے قاتل کی نشاندہی کرنے والے کو ایک کروڑ روپے انعام دیا جائے گا اور اس کا نام بھی صیغہ راز میں رکھا جائے گا ۔وزیر اعلیٰ پنجاب نے قصور واقعہ کے حوالے سے اعلیٰ سطح اجلاس کی صدارت کی اجلاس کے دوران وزیر اعلیٰ پنجاب نے آر پی او شیخوپورہ پر برہمی کا اظہار کیا کہ ایک سال کے دوران اتنے واقعات ہو گئے وہ کیا کرتے رہے۔ ان کا کہنا تھا کہ 24 گھنٹے کے اندر اندر زینب کیس کا چالان عدالت میں پیش کیا جائے۔وزیر اعلیٰ پنجاب کا کہنا تھا کہ پولیس کی فائرنگ سے شہید ہونے والے افراد کے لواحقین کو30 ،30 لاکھ روپے دیئے جائیں گے اور ان کے اہلخانہ میں سے ایک ایک فرد کو سرکاری نوکری بھی دی جائے گی۔جن پولیس والوں نے فائرنگ کی انہیں قانون کے مطابق سزا دی جائے گی ۔شہباز شریف کا کہنا تھا کہ لاہور سیف سٹی پروجیکٹ کے تحت جو کیمرے لگائے جا رہے ہیں ان کا دائرہ کار قصور تک بڑھا دیا جائے جتنی بھی رقم اس مقصد کے لیے خرچ ہو گی فراہم کی جائے گی اور قصور کو بھی سیف سٹی منصوبہ میں شمل کیا جائے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں